Our website is only made possible by displaying online advertisements to our visitors.
Please consider supporting us by disabling your ad blocker.

Heart catching poetry

Posted by @draligi 300 days ago

اَدائیں حشر جگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے خیال حرف نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے بہشتی غنچوں میں گوندھا گیا صراحی بدن گلاب خوشبو چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے قدم ، اِرم میں دَھرے ، خوش قدم تو حور و غلام چراغ گھی کے جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے دِہکتا جسم ہے آتش پرستی کی دعوت بدن سے شمع جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے غزال قسمیں ستاروں کی دے کے عرض کریں حُضور! چل کے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے چمن کو جائے تو دَس لاکھ نرگسی غنچے زَمیں پہ پلکیں بچھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے کڑکتی بجلیاں جب جسم بن کے رَقص کریں تو مور سر کو ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے حسین پریاں چلیں ساتھ کر کے ’’سترہ‘‘ سنگھار اُسے نظر سے بچائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے یہ شوخ تتلیاں ، بارِش میں اُس کو دیکھیں تو اُکھاڑ پھینکیں قبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے وُہ پنکھڑی پہ اَگر چلتے چلتے تھک جائے تو پریاں پیر دَبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں ہم عید روز منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے زَمیں پہ خِرمنِ جاں رَکھ کے ہوشمند کہیں بس آپ بجلی گرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے جنہوں نے سائے کا سایہ بھی خواب میں دیکھا وُہ گھر کبھی نہ بسائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے اُداس غنچوں نے جاں کی اَمان پا کے کہا یہ لب سے تتلی اُڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے کمر کو کس کے دوپٹے سے جب چڑھائے پینگ دِلوں میں زَلزلے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے وُہ آبشار میں بندِ قبا کو کھولے اَگر تو جھرنے پیاس بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے شریر مچھلیاں کافِر کی نقل میں دِن بھر مچل مچل کے نہائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے حلال ہوتی ہے ’’پہلی نظر‘‘ تو حشر تلک حرام ہو جو ہٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے جو کام سوچ رہے ہیں جناب دِل میں اَبھی وُہ کام بھول ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے نہا کے جھیل سے نکلے تو رِند پانی میں مہک شراب سی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے چرا کے عکس ، حنا رَنگ ہاتھ کا قارُون خزانے ڈُھونڈنے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے کُنواری دِیویاں شمعیں جلا کے ہاتھوں پر حیا کا رَقص دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے چنے گلاب تو لگتا ہے پھول مل جل کر مہکتی فوج بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے غزال نقشِ قدم چوم چوم کر پوچھیں کہاں سے سیکھی اَدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے سرہانے میر کے ٹُک فاتحہ کو گر وُہ جھکے تو میر جاگ ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے حسین تتلیاں پھولوں کو طعنے دینے لگیں کہا تھا ایسی قبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے اَگر لفافے پہ لکھ دیں ، ’’ملے یہ ملکہ کو‘‘ تو خط اُسی کو تھمائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے عقیق ، لولو و مرجان ، ہیرے ، لعلِ یمن اُسی میں سب نظر آئیں ، وُہ اتنا دلکش ہے گلاب ، موتیا ، چنبیلی ، یاسمین ، کنول اُسے اَدا سے لُبھائیں ، وُہ اتنا دلکش ہے مگن تھے مینہ کی دُعا میں سبھی کہ وُہ گزرا بدل دیں سب کی دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے شراب اور ایسی کہ جو ’’دیکھے‘‘ حشر تک مدہوش نگاہ رِند جھکائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے نُجومی دیر تلک بے بسی سے دیکھیں ہاتھ پھر اُس کو ہاتھ دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے بدل کے ننھے فرشتے کا بھیس جن بولا مجھے بھی گود اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے ہمیں تو اُس کی جھلک مست مور کرتی ہے شراب اُسی کو پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے بہانے جھاڑُو کے پلکوں سے چار سو پریاں قدم کی خاک چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے وُہ چُومے خشک لبوں سے جو شبنمِ گُل کو تو پھول پیاس بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے کبھی کبھی ہمیں لگتا ہے بھیگے لب اُس کے ہَوا میں شہد ملائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے مکین چاند کے بیعت کو جب بلاتے ہیں دَھنک کی پالکی لائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے جفا پہ اُس کی فدا کر دُوں سوچے سمجھے بغیر ہزاروں ، لاکھوں وَفائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے سفید جسم جو لرزے ذِرا سا بارِش میں تو اَبر کانپ سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے جو اُس کو چومنا چاہیں ، اَگر وُہ چومنے دے تو چوم پھر بھی نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے ستارے توڑ کے لانے کی کیا ضرورت ہے ستارے دوڑ کے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے چمن میں اُس نے جہاں دونوں بازُو کھولے تھے وَہاں کلیسا بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے ہم اُس کے چہرے سے نظریں ہٹا نہیں سکتے گلے سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے وُہ جتنا جسم تھا ، اُتنا غزل میں ڈھال لیا طلسم کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے غلام بھیجتا ، سر آنکھوں پر بٹھا لیتے اُسے کہاں پہ بٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے تمام آئینے حیرت میں غرق سوچتے ہیں اُسے یہ کیسے بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے زَبان وَصف سے عاجز ، حُروف مفلس تر قلم گھسیٹ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے طلسمِ حُسن ہے موجود لفظوں سے اَفضل لغت جدید بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے قسم ہے قیس تجھے توڑ دے یہیں پہ قلم رَفیق مر ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے read more